اس لیڈی ڈاکٹر کی جان کس نے لی؟

انڈیا کے اقتصادی دارالحکومت ممبئی میں تین ڈاکٹروں کو ان الزامات میں گرفتار کیا گیا ہے کہ وہ اپنی نوجوان ساتھی ڈاکٹر کو ہراساں اور پریشان کیا کرتے تھے جس کی وجہ سے انھوں نے خودکشی کر لی۔

بی بی سی مراٹھی سروس کی جھانوی مولے اور پروین ٹھاکرے کی رپورٹ یہاں پیش کی جا رہی ہے۔

عابدہ تڈوی پرنم آنکھوں سے پوچھتی ہیں: ‘میں فخر سے کہتی تھی کہ میں ڈاکٹر پایل کی ماں ہوں، لیکن اب میں کیا کہوں گی؟’

ان کی 26 سالہ بیٹی پایل تڈوی نے مبینہ طور پر ذات پات کی بنیاد پر مہینوں ہراساں کیے جانے کے بعد 22 مئی کو خودکشی کر لی۔ وہ ایسے قبیلے سے تعلق رکھتی تھیں جو صدیوں سے تاریخی طور پر پسماندہ رہا ہے۔

پایل کے اہل خانہ نے ان کی تین سینیئر ڈاکٹر ساتھیوں کو ان کی موت کا ذمہ دار قرار دیا ہے کہ وہ انھیں ہراساں کیا کرتی تھیں۔ یہ تینوں ڈاکٹر خواتین ہیں۔

پولیس کے نائب کمیشنر ابھیناش کمار نے بی بی سی کو بتایا کہ پولیس نے تینوں ملزمان کو منگل کے روز گرفتار کر لیا ہے اور معاملے کی جانچ کر رہی ہے۔