دن کی روشنی اور رات کی نیند کا آپس میں کیا تعلق ہے؟

سونے اور بیداری کا عمل اہم انسانی رویوں میں سے ایک ہے۔ ہم اپنی زندگی کا تقریباً ایک تہائی حصہ سوتے گزار دیتے ہیں اور اس کے بغیر زندہ نہیں رہ سکتے۔

سوتے وقت ہمارا دماغ معلومات کو یاد کرتا اور اس پر کام کرتا ہے۔ ہمارا جسم نامیاتی مادے کو صاف کرتا اور اپنی مرمت کرتا ہے جس سے ہم جاگنے کے بعد صحیح طرح سے کام کر سکتے ہیں۔

حتیٰ کہ انتہائی کم عرصے کے لیے بھی نیند سے محرومی ہماری صحت کو متاثر کر سکتی ہے۔ ہم میں سے اکثر کا ایک رات نہ سونے کے باعث برا حال ہو جاتا ہے اور نیند کے بغیر تین راتوں کے بعد ہمارا کام بری طرح سے متاثر ہوتا ہے۔

ایک مطالعے کے مطابق 17 سے 19 گھنٹے جاگنے سے بہت سے معاملات کو سمجھنے کی صلاحیت بالکل ویسے ہی متاثر ہوتی ہے جیسے ایک شراب پینے والے کی۔

یہ اثرات وقت کے ساتھ بد سے بدتر ہوتے جاتے ہیں۔ نیند کے بغیر گزارا گیا سب سے طویل ترین وقت گیارہ دن سے زیادہ تھا جس کے نتیجے میں شدید نفسیاتی تبدیلیاں دیکھی گئیں۔ پوری توجہ سے کام کرنے اور قلیل مدتی حافظے سمیت دماغ میں خلل جیسے مسائل بھی پیدا ہوئے۔

لیکن جہاں سائنس دان ایک عرصہ قبل نیند کی اہمیت کو سمجھ چکے ہیں وہیں اس میں قدرتی روشنی کے اہم کردار کو کبھی کبھی نظرانداز بھی کیا جاتا ہے۔

کیٹاگری میں : صحت